نظریہ جبر کے بارے میں حکیم عمر خیام کا نظریہ


 نظریہ جبر   کے  بارے  میں  حکیم عمر خیام کا  نظریہ

                        عمر خیام کی نظر میں انسان  مجبور  ۔ حکیم عمرخیام کہتا ہے کہ انسان گردوں گرداں  کے ہاتھوں مجبور ہے۔ خوشی کے لمحے اگر نصیب بھی ہوتے ہیں تو یہ آنے والی مصیبت کا پیشہ خیمہ بن جاتے ہیں۔  انسانوں کی ہستی شطرنج کے مہروں کی سی ہے جنہہیں آسمان کی حرکت کچھ عرصہ ادھر ادھر پھراتی ہے پھر صندوق عدم میں ڈال جاتی ہے۔

ازروری حقیقت است نہ از روی مجاز                     مائعبت گا نیم و فلک لعبت باز

                        عمر خیام انسانی زندگی کو حسرت وخرمان کا مجموعہ تو خیال کرتا ہے لیکن وہ بے بس ہو کر آنسو  نہیں بہاتا۔بلکہ ایک فلسفی کی طرح ایسی حالت میں بھی جینے کی تدبیر بتاتاہےاور  یہ تلقین کرتا ہے کہ  رنج وغم کو بھولنے کی کوشش کرو۔ جو وقت گزر چکا ہے وہ لوٹ کر نہیں آئے گا اور جو وقت آنے والا ہے اس کے متعلق کچھ نہیں کہا جاسکتا ہے  اس لیئے موجودہ زمانے سے ہی سروکار رکھو ، اگر تم خوش ہو تو خوب خوشی مناؤ اور اگر رنج و  اندوہ  کا شکار ہو تو بھولنے کی کوشش کرو ۔

روزی کہ گزشتہ  است از  و   یاد   مکن                       فردا کہ نیا مدہ است فریاد مکن

برنامہ و  گزشتہ   بنیاد   مکن                                            حالی خوش باش و  عمر   برباد  مکن

Persian poet Umar Khian
Persian poet Umar Khian

                        فلسفہ جبر ۔ عمر خیام کی رباعیوں سے پتہ چلتاہے  کہ وہ عقیدہ جبر کا پیروی  کرنے  والا تھا۔ اس کے نزدیک انسان بے بس اور مجبور ہے، اپنے ارادے سے وہ کچھ نہیں کر سکتا۔ انسانی زندگی کواکب (ستاروں)کے گردش کے تا بع  ہے لیکن کواکب کی گردش بھی مجبوری کا نتیجہ ہے۔ پس اگر ہم مجبور ہیں تو کواکب کی گردش ہم سے بھی زیادہ مجبور اور  بے  بس ہیں، گویا ساری دنیا ساری کا ئنات مجبوری کا پتہ دیتی ہے۔

خوبی و  بد ی کہ در نہاد  بشر است             بشادی و غمی کہ در قضا و قدر است

با چرخ مکن حوالہ کاندر رہ عقل                   چرخ   از  تو   ہزار  بار   بی چارہ تر  است

                        فلسفہ نشاط۔    عمر خیام نشاط و لذت کا اتنی شگفتگی سے ذکر کرتا ہے کہ اس کی رباعیات بالکل عشرت پسند اپیکو رس کی صدائے بازگشت  معلوم ہوتی ہیں ۔

یک شیشہ شراب و لب یارو لب کشت             این جملہ مرا  نقد و  ترا نسیہ بہشت

قومی بہ بہشت و دوزخ اندر گردند                                     کہ رفت بدوزخ و کہ آمد ز بہشت

                        ذکر شراب۔شاعر شراب تو پیتے ہیں لیکن اکثر لوگ ان کی شراب کو رفتہ رفتہ شراب معرفت سمجھنے لگتے ہیں ۔حافظ شیرازی بھی ایسے ہی خوش نصیب شاعروں میں سے تھے لیکن عمر خیام نے اتنے شوق اور شیفتگی سے مادی شراب پی ہے کہ کسی کو اس کی شراب نوشی میں شبہ نہیں رہتا۔

گرفوت شوم ببادہ شوئیدمرا                                 تلقین  ز شراب ناب گو ئید مرا

خواہید کہ روز حشر   یا بید   مرا                                  ازخاک در میکدہ   جو یید   مرا

                شباب (جوانی)کے عارضی ہونے کا غم ۔ عمر خیام کو شباب بہت عزیز ہے، اسے افسوس ہے کہ زندگی کا یہ خوبصورت اور گراں مایہ حصہ بہت جلد  گزر جانے والا ہے ۔ایام شباب (جوانی کے دن)کے جلد رخصت ہونے کا بڑے سوزو گداز سے ذکر کیا ہے ۔

افسوس کہ نامئہ جوانی طے شر                         دین تازہ بہار زندگانی طے شد

آن مرغ طرب کہ نام او   بود  شباب          فریاد  ندانیم کی آمد وکی شد

                بے ثباتی دنیا۔ عمر خیام کا دل بے ثباتی دنیا پر سخت پریشان اور  کڑھتا ہے۔ عمر خیام کے نزدیک دنیا بے ثباتی  کی ایک المیہ داستان ہے۔ شاہ وگدا ، امیر و وزیر کوئی فنا کے ہاتھوں محفوظ نہیں رہ سکتا ہے۔ یہ مٹی جو پاؤں تلے روندی جاتی ہے گزری ہوئی با عظمت ہستیوں کی یاد دلاتی ہے ۔

خاکی کہ زیر   پای ہر حیوانی است                 زلف صنہی و عارض جانانی است

ہر خشت کہ برکنگرہ ایوانی است                 انگشت وزیری و  سر سلطانی است ۔

                        گفتار کا مخلص۔ عمر خیام اپنے خیالات کے اظہار کے بارے میں بہت زیادہ مخلص تھا۔ وہ جس بات کو درست سمجھتا ہے اس کا اظہار بڑی بے باکی سے کرتا ہے، یہ ہر گز خیال نہیں کرتا کہ دوسرے اس کے متعلق کیا کہےنگے۔ لوگوں کی نظروں میں مقبولیت حاصل کرنے کے لیئے کسی باطل عقیدے کو وہ کبھی حق نہیں کہتا ۔

                اخلاقی تعلیم۔ اکثر ہم دیکھتے ہیں کہ انسانوں کے قول وقرار میں بہت فرق ہوتا ہے، لوگ ایک دوسرے کا حق نصیب کرتے ہیں ایک دوسرے کو اذیت پہنچاتے ہیں اور اس کے باوجود بھی شرماتے نہیں ہیں۔ عمر خیام مغفرت کی دعا بڑے  انوکھے انداز میں مانگتا ہے، خود اپنے لے کچھ نہیں کہتا  بلکہ پیالہ گیر ہاتھ کے لیئے دعا مانگتا ہے اور اپنی جبین کے لیئے دعا مانگتا ہے جو مے خانہ کے دروازے پر جھکتی ہے ۔


About admin

Check Also

سلجوقی دور کا رباعی گو شاعر بابا طاہر عریاں کی حالات زندگی پر ایک نظر

سلجوقی دور کا  رباعی گو  شاعر  بابا طاہر عریاں  کی  حالات  زندگی  پر  ایک  نظر …

Leave a Reply